Category:-
Faraz Ahmed Faraz Ghazal


سنگ دل ہے وہ تو کیوں اس کا گلہ میں نے کیا
 جبکہ خود پتھر کو بت، بت کو خدا میں نے کیا

کیسے نامانوس لفظوں کی کہانی تھا وہ شخص
 اس کو کتنی مشکلوں سے ترجمہ میں نے کیا

وہ اول محبت وہ میری پہلی شکست
 پھر تو پیمان وفا سو مرتبہ میں نے کیا

 اس سزا وارِ سزا کیوں جب مقدر میں میرے
جو بھی اس جانِ جہان نے لکھ دیا میں نے کیا

وہ ٹھہرتا کیا کہ گزرا تک نہیں جس کے لئے
 گھر تو گھر ہر راستہ آراستہ میں نے کیا

 مجھ پہ اپنا جرم ثابت ہو نہ ہو لیکن فراز

لوگ کہتے ہیں کہ اس کو بے وفا میں نے کیا