Category:-
Faraz Ahmed Faraz Shayari

فراز احمد فراز غزل


پیشہ ور  گواہو ں کی  اور  بھی  مثالیں  تھیں
 مجھ کو قتل کرنے میں منصفوں کی چالیں تھی

 آدھی  رات  بستی  میں  نقب زن  جب  آئے  تھے
 جھانجھریں تھیں پاؤں میں ہاتھ میں کدالیں تھی


سادہ  دل  تماشائی   پھر  فریب  کھا  بیٹھے
 بھیڑیوں کے جسموں پر ہرنیوں کی کھالیں تھی


کچھ درخت ایسے تھے فصل گل میں بھی جن پر
 زرد زرد پتے تھے خشک خشک چھالیں تھیں

اپنا    دور پر کھنچنا کیوں لگا عجب سب کو
 کشتگان شب کی تو ان گنت مثالیں تھیں

خون بے گناہ کو جب بھی بیچ کر آئے
 دوستوں کے شانوں پر زرنگار شالیں تھی

Paisha'war Gawa'on ke aur bhe Misalyn The
Mujh ko Qatal Karny mein Munsafon ke Chalyn The

Aadhi Raat jub basti mein Naqb'Zan Aye Thy
Jhahnjaryn The Paon mein Hath mein Kadaalyn The

Sadaa Dil Tamashaai Phr Feraib Khaa Bethy
Behreyon ke jismon per Haraniyon ke Khalyn The

Kuch Darakht Ayse They  Fasl e Gul mein bhe Jin Per
Zard Zard Patty Thy Kushk Kushk Chaalyn The

Apna Dor Per Khanchana Kyun Laga Ajab Sub Ko?
Kush'tagany Shab ke To Un'Ginat Misalyn The

Khoon e Be'Gunaah ko jub bhe Baich k Aaye
Doston ke Shano per Zar'Nigaar Shaalyn The





0 Comments