Category:-
Ahmed Faraz Shayari Ghazal

نہ سہہ سکا مسافتوں کے عذاب سارے

احمد فراز غزل


نہ سہہ سکا مسافتوں کے عذاب سارے
 تو کر گئے کوچ میری آنکھوں سے خواب سارے

 بیاضِ دل پر غزل کی صورت رقم کیے ہیں
 تیرے کرم بھی، تیرے ستم بھی، حساب سارے

 بہار آئی ہے تم بھی آؤ ادھر سے گزرو 
کہ دیکھنا چاہتے ہیں تم کو گلاب سارے

یہ واقعہ ہے کہ واعظوں سے الجھ پڑے ہم
 یہ واقعہ ہے کہ پی رہے تھے شراب سارے

 بھلا ہوا ہم گناہ گاروں نے ضد نہیں کی 
سمیٹ کر لے گیا ہے ناصح ثواب سارے

فراز کس نے میرے مقدر میں لکھ دیے ہیں
 بس ایک دریا کی دوستی میں سراب سارے  

Naa seh saka mosafaton ke azaab sary
To kar gey kooch meri aankhon sy khawab sary

Biyad e Dil per ghazal ke soorat raqam kiye hein
Tery karam bhe,tery sitam bhe,hisaab sary

Bahaar aai ha tm bhe ao ider sy guzro
key dekhna chahty hein tm ko gulaab sary

Yeh waqiaa ha key wahzon sy ulahj pary hum
yeh ha key pee rahy thy sharaab sary

Bhala huwa hum gunah'gaaron ne zid nahi ke
Smait ker ly geya ha naaseh sawaab sary

Faraz kis ne mery moqadar mein likh diye hein
Bus aik daryaa ki dosti mein saraab sary




0 Comments