فراز احمد فراز

 ہو کہ نہ ہو

شہر میں اب کوئی دیوانہ رہا   ہو کہ نہ ہو

 مر گ ِ انبوہ تو ہے جشن بپا   ہو کے نہ ہو 

شورِ مستاں تو بہت ہے مگر اس فصل میں بھی 

ہاتھ اٹھیں یا نہ اٹھیں چاک قبا   ہو کہ نہ ہو

یا دے یاراں بہت آتی ہے مگر سوچتی ہیں 

 اب وطن میں کوئی اپنا بھی   رہا ہو کہ نہ ہو 

دل کو سوجھا تو ہے مضمون تیری خوش قامتی کا 

ہم سے کو تا ہ بیانوں سے   ادا ہونہ ہو 

شکر ہے اے دلِ احسان فرامو ش کہ توُ

 درخورِرنجشِ بے جا بھی   رہا ہو کہ نہ ہو

آخری تیر شکاری کا میری گھات میں ہے

پھر میرے بعد کوئی نغمہ سرا   ہو کہ نہ ہو


Shaher mein diwana koi raha ho key na ho

Marg e Anboh to ha Jashn birpaa ho key na ho

Shor e Mastan to Bhot hein magar is fasal mein bhe

Hath uthyn key na uthyn,Chaak Qubaa ho key na ho

Yaad e Yaaran Bhot ati hein magar sochti hein

ub watan mein koi apna bhe raha ho key na ho

Dil ko suhjha to ha mazmoon teri khush qamti ka

Hum sy kotah Biyano sy Adaa ho key na ho

Shuker ha Ay Dil e Ehsan Faramosh key Tu

Dar khor e Ranjish Be'jaa bhe raha ho key na ho

Akhri Teer shikari ka meri ghaat mein ha 

Phr mery bhad koi Nagma siraa ho key na ho